اسلام،  زبدة الفقہ،   کتاب طہارت،


مکروہاتِ مسواک
١. لیٹ کر مسواک کرنا ( اس سے تلی بڑھتی ہے) ۔
٢. مٹھی سے پکڑنا ( اس سے بواسیر ہو جاتی ہے) ۔
٣. مسواک کو چوسنا (اس سے بینائی جانے کا اندیشہ رہتا ہے) ۔
٤. مسواک کو زمین پر ایسے ہی لٹا کر رکھنا ( اس سے جنون کا اندیشہ ہے اس لئے کھڑی رکھے اور ریشہ اوپر کی جانب ہو) ۔
٥. فراغت کے بعد مسواک کا نہ دھونا ۔
٦. انار یا ریحان یا بانس یا میوہ دار یا خوشبودار درخت کی لکڑی سے کرنا ۔ ٧. مسواک دانتوں کے طول میں یعنی اوپرسے نیچے کو کرنا ۔

مسواک کا حکم
مسواک وضو کی سنت ہے نہ کہ نماز کی پس جب مسواک کو ساتھ وضو کیا تو اس وضو سے جتنی نمازیں پڑھے گا ہر نماز کا ثواب مسواک کے وضو والی نماز کا ہو گا ۔
مندرجہ ذیل اوقات میں مسواک کرنا مستحب ہے
١. دیر تک وضو نہ کرنے کی وجہ سے منھ کی بو بدل جائے تو مسواک کرنا ۔ ٢. اگر وضو کے وقت مسواک کرنا بھول جائے تو نماز کے وقت مسواک کرنا ۔ ٣. وضو کے ساتھ مسواک کرنے کے باوجود ہر نماز کے وقت مسواک کرنا ۔
٤. سو کر اٹھنے کے بعد ۔
٥. دانتوں پر زردی آ جانے کے وقت مسواک کرنا وغیرہ



پچھلا صفحہ
اگلا صفحہ